Qaseeda E Meraj By Aalahazrat  
(Urdu, Roman , English translation with Tazmeen)
Written By: Imam Ahmed Raza Khan Fazile Barelwi (Wafat 1340 Hij)
English Translation By: Prof. G.D. Qureshi (England)
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij)

 

A Meraj Poem expressing sincere and perfound feelings of immense joy on the festive occation of tha journey to the Highest Heaven by the Most illustratious Prophet Muhammed (Peace and Blessings of Allah be Upon Him.)
Qaseeda E Me’raj Verses
Qaseeda e Mairaj Verse 01
“وہ سرورِ کِشورِ رِسالت ، جو عرش پر جلوہ گَر ہو ئے تھے
نئے نِرالے طَرَب کے ساماں عَرَب کے مہمان کے لیے تھے”
Woh sarwar e kishwar e risalat jo arsh per jalwah gar huye thay
 Naye nirale tarab kay saaman Arab ke mehman kay liye thay.
English Translation Verse 01
When the supreme Prophet went to his journey to the Divine Throne of Allah,
 There were very special arrangements made to welcome the unique guest from Arabia’
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -01
کہیں مبارک کہیں سلامت ، کہیں مسرّت کے غلغلے تھے
صلوٰۃ کے گیت نعت کی گت ، ثنا کے باجے بَجارہے تھے
وَرَفَعنَا کی بجا کے نوبت ، مَلک سلامی اُتارتے تھے
“وہ سرورِ کِشورِ رِسالت ، جو عرش پر جلوہ گَر ہو ئے تھے
نئے نِرالے طَرَب کے ساماں عَرَب کے مہمان کے لیے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 02
“بہار ہے شادیاں مُبارک ، چمن کو آبادیاں مُبارک
مَلک فلک اپنی اپنی لَے میں ، یہ گھر عنادِل کا بولتے تھے
Bahar hai shadiyan mubarak chaman ko aabadiyan mubarak
 Malak falak apni apni lay main yeh ghur ana dil ka boltay thay.
English Translation Verse 02
It was springtime; there were echoes of salutary greeting in the dales;
 Then Angels and the skies were singing happy songs in their own way like the nightingales.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -02
. مُبارک اے باغباں مبارک ، خُدا کرے جاوداں مُبارک
بہارِ گل کا سماں مبارک ، عنادلِ نغمہ خواں مبارک
زمین سے تاآسماں مبارک، یہاں مبارک وہاں مبارک
“بہار ہے شادیاں مُبارک ، چمن کو آبادیاں مُبارک
مَلک فلک اپنی اپنی لَے میں ، یہ گھر عنادِل کا بولتے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 03
“وہاں فلک پر یہاں زمیں میں رچی تھیں شادی مچی تھیں دُھومیں
اُدھر سے انوار ہنستے آتے ، اِدھر سے نَفحات اُٹھ رہے تھے
Wahan falak per yahan zameen main rachi thi shaadi machi thi dhoomein
 Udhar say anwar hastay aatay idhar say anwaar ooth rahay they.
English Translation Verse 03
On the Heavens above and the earth below there was festive celebration;
 The dazzling lights came down smiling and the fragrant perfumes went up on this occasion.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) –03
کہیں فرشتوں کی انجمن میں ، مُبارکی گارہی تھیں حوریں
کہیں وہ نور اور وہ ضِیائیں ، جہاں فرشتے بچھائیں آنکھیں
دِکھارہی تھیں نِرالی شانیں ، اُس ایک نوشہ کی دو براتیں
“وہاں فلک پر یہاں زمیں میں رچی تھیں شادی مچی تھیں دُھومیں
اُدھر سے انوار ہنستے آتے ، اِدھر سے نَفحات اُٹھ رہے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 04
“یہ چُھوٹ پڑتی تھی اُن کے رُخ کی ، کہ عرش تک چاندنی تھی چھٹکی
وہ رات کیا جگمگا رہی تھی ، جگہ جگہ نصب آئنے تھے
Yeh choot parti thi unkay rukh ki kay arsh tak chandni thi chhatki
 Woh raat kiya jagmaga rahi thi jagah jagah nasab aainay they.
English Translation Verse 04
The light emitted by his radiant face created a moonlight near Allah’s throne;
 The night was resplendently lit through a multitude of mirrors and brightly shone.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -04
کچھ ایسی اُس شب میں تھی تجلّی ، کہ جابجا نورکی جھلک تھی
وہ ہر جگہ عالَمِ صفائی ، ہوئی تھی عالَم کی شیشہ بندی
ضِیاے ماہِ عرب جو چمکی ،تو روشنی دُور دُور پھیلی
“یہ چُھوٹ پڑتی تھی اُن کے رُخ کی ، کہ عرش تک چاندنی تھی چھٹکی
وہ رات کیا جگمگا رہی تھی ، جگہ جگہ نصب آئنے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 05
“نئی دُلھن کی پھَبَن میں کعبہ ، نِکھر کے سنورا سنور کے نِکھرا
حَجَر کے صدقے کمر کے اِک تِل میں رنگ لاکھوں بناو کے تھے
Nayi dulhan ki phaban main Kaaba nikhar kay sanwara sanwar kay nikhra
 Hajar key sadqay kamar key eik til main rang lakhoon banao key they.
English Translation Verse 05
The Kaaba dressed herself most immaculately to welcome her bridegroom with pride;
 The black stone looked like a beautiful mole on her charming body’s side.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -05
تجلّیوں کا وہ رُخ پہ سہرا ، بدن میں وہ نور کا شہانا
سجا سجایا بنا بنایا ، خُدا کے گھر میں وہ شاہ آیا
نظر سے گذرا عجب تماشا ، کہ رنگ پایا یہاں نرالا
“نئی دُلھن کی پھَبَن میں کعبہ ، نِکھر کے سنورا سنور کے نِکھرا
حَجَر کے صدقے کمر کے اِک تِل میں رنگ لاکھوں بناو کے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 06
“نَظَر میں دُولھا کے پیارے جلوے ، حیا سے محراب سر جُھکائے
سیاہ پردے کے منھ پر آنچل تجلّیِ ذاتِ بَحت سے تھے
Nazar main dulha key pyaray jalway haya say mehrab sir jhukaye
 Siyah parday kay moun per aanchal tajaliye zaat e bahat say thay.
English Translation Verse 06
With bashful looks the niche lowered her upright head in sheer delight;
 The covering black curtain gracefully moved, saturated with the Divine Light,
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -06
. دلھن پہ یہ شوق کے تقاضے ، کہ چل کے نوشاہ کے قدم لے
مگر لحاظ و ادب نے بڑھ کے ، وہ ولولے دل کے دل میں روکے
لِقا کی حسرت میں آنکھ کھولے ، چُھپائے گُھونگٹ میں منھ اَدا سے
“نَظَر میں دُولھا کے پیارے جلوے ، حیا سے محراب سر جُھکائے
سیاہ پردے کے منھ پر آنچل تجلّیِ ذاتِ بَحت سے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 07
“خوشی کے بادل اُمَنڈ کے آئے ، دِلوں کے طاوس رنگ لائے
وہ نغمۂ نعت کا سماں تھا ، حَرَم کو خود وجد آرہے تھے
Khushi kay badal umand kay aaye diloon kay taoos rang laye
 Woh naghma e naat ka samaan tha Haram ko khud wajd aa rahe thay.
English Translation Verse 07
The clouds spontaneously advanced and the hearts engaged in a peacock dance;
 To honour the Prophet in a creative stance the Kabaa gazed at him in a lyrical trance.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -07
خدا نے داغِ الم مٹائے ، بہارِ شادی کے دن دکھائے
نسیمِ عشرت نے گُل کِھلائے ، طرب کی خوشبو سے دل بسائے
چمن مسرت کے لہلہائے ، عنادلِ شوق چہچہائے
“خَوشی کے بادل اُمَنڈ کے آئے ، دِلوں کے طاوس رنگ لائے
وہ نغمۂ نعت کا سماں تھا ، حَرَم کو خود وجد آرہے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 08
“یہ جُھوما مِیزابِ زَر کا جُھومر ، کہ آرہا کان پر ڈھلک کر
پُھوہار برسی تو موتی جھڑ کر ، حطیم کی گود میں بھرے تھے
Yeh jhooma Mizab e zar ka jhoomer kay aa raha kaan per dhalak ker
 Phuhar barsi to moti jhar ker Hatim ki gaud mein bharay they.
English Translation Verse 08
The golden ornaments of Meezaab gently moved towards the ear from her forehead;
 When it drizzled, the raindrops gathered like pearls on Hateem’s welcoming bed.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -08
. حرم کا وہ حُسن اور زیور ، وہ نعت شایانِ شانِ سرور
وہ حالتِ وجد بام و در پر ، کہ جُھومتا تھا مزے میں سب گھر
وہ عالَمِ کیف تھا سَراسَر ، کہ ہوش سے سب ہو ئے تھے باہر
“یہ جُھوما مِیزابِ زَر کا جُھومر ، کہ آرہا کان پر ڈھلک کر
پُھوہار برسی تو موتی جھڑ کر ، حطیم کی گود میں بھرے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 09
“دُلھن کی خوشبو سے مست کپڑے ، نسیم گُستاخ آنچلوں سے
غلافِ مُشکیں جو اُڑ رہا تھا غَزال نافے بسارہے تھے”
Dulhan ki khushboo say mast kapray nasim e gustakh aanchloon say
 Gilaf e mushkeen jo Oord raha tha ghazal naafe bassa rahay thay.
English Translation Verse 09
The bride’s body-fragrance intoxicated the surrounding breeze and her own garment;
 When the perfumed curtain furled, the gazelles rushed to store its unique scent.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -09
. بہارِ جنّت سے گُندھ کے آئے ، دُلھن کی خاطر وہ ہار و گجرے
کہ جن کی مستی فزا مہک نے ، اُڑا دیے تھے دماغ سب کے
دکھائے خود رفتگی نے جلوے ،سَرور آئے نئے نرالے
“دُلھن کی خوشبو سے مست کپڑے ، نسیم گُستاخ آنچلوں سے
غلافِ مُشکیں جو اُڑ رہا تھا غَزال نافے بسارہے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 10
“پہاڑیوں کا وہ حُسنِ تزئیں ، وہ اُونچی چوٹی وہ ناز و تمکیں
صبا سے سبزہ میں لہریں آتیں ، دُوپٹے دھانی چُنے ہو ئے تھے”
Pahardiyoon ka woh husn e Taz’een woh oonchi choti woh nazo tamqeen
 Saba say sabzah main lehrein aateen dupatay dhani chunay huye thay.
English Translation Verse 10
The happy hills smiled and their elegant tops stood out in space;
 Like a maiden’s head-scarf the shoots of green grass rhythmically moved with grace.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -10
. وفورِ سبزہ سے لہلہاتیں ، اکڑ کے جوبن کی دھج دِکھاتیں
گلوں کی سبزے میں ڈالیاں تھیں ، کہ سبز پوشاک عطر آگیں
وہ طرزِ شایستہ و خوش آئیں ، وہ نیچادامن وسیع و رنگیں
“پہاڑیوں کا وہ حُسنِ تزئیں ، وہ اُونچی چوٹی وہ ناز و تمکیں
صبا سے سبزہ میں لہریں آتیں ، دُوپٹے دھانی چُنے ہو ئے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 11
“نہا کے نہروں نے وہ چمکتا ، لباس آبِ رواں کا پہنا
کہ موجیں چَھڑیاں تھیں دھار لَچکا ، حَبابِ تاباں کے تھَل ٹَکے تھے”
Naha kay nehroon nay woh chamakta libas aabay rawan ka pehna
 Kay maujen chardiyaan theen dhaar lachka habab e tabaan kay thal takay thay.
English Translation Verse 11
The fresh-looking and well-clad rivers ran through the well-trimmed bowers;
 It was a rare visual feast of stormy waves, rushing waterfalls and bubbling showers.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -11
 . چمکتے تاروں کا عکسِ زیبا ، ہوا کچھ اس طرح زینت افزا
لگادیا جابجا سِتارا ، کہیں رُوپہلا کہیں سنہرا
کناروں پر جو اُگا تھا سبزہ ، وہ سبز مخمل کا حاشیہ تھا
“نہا کے نہروں نے وہ چمکتا ، لباس آبِ رواں کا پہنا
کہ موجیں چَھڑیاں تھیں دھار لَچکا ، حَبابِ تاباں کے تھَل ٹَکے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 12
“پُرانا پر داغ ملگجا تھا اُٹھا دیا فرش چاندنی کا
ہجومِ تارِ نگہ سے کوسوں قدم قدم فرش بادلے تھے”
Purana purdag malgaja tha utha diya farsh chandni ka
 Hajoom e taringah say kosoon qadam kadam farsh badily thay.
English Translation Verse 12
The old white-floor of moonlight was removed as it was not satin-free;
 The new green-floor consisted of gardens and flowers as far as one could see.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -12
. تجلّی نورِ حق کا جلوا ، رچا ہوا تھا یہاں سراپا
چمک سے پُرنور گوشہ گوشہ ، بنا تھا خورشید ذرّہ ذرّہ
بساط تھی ماہ تاب کی کیا ، جو بزمِ عالم میں بار پاتا
“پُرانا پر داغ ملگجا تھا اُٹھا دیا فرش چاندنی کا
ہجومِ تارِ نگہ سے کوسوں قدم قدم فرش بادلے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 13
“غبار بن کر نثار جائیں ، کہاں اب اُس رہ گذر کو پائیں
ہمارے دل حُوریوں کی آنکھیں فرشتوں کے پر جہاں بِچھے تھے
Ghubar ban ker nisaar jayein kahan ab uss rah guzar ko payein
 Hamaray dil huriyoon ki aankhein farishtoon kay per jahan biche thay.
English Translation Verse 13
More precious to us than our lives! Where is the Blessed Prophet’s blessed pathway,
 On which our humble hearts, the heavenly damsels and wings of the angels lay.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -13
. کہاں سے اے دل نصیب لاؤں ، جو تجھ کو وہ بارگہ دِکھائیں
فراق میں پھر نہ تنگ آئیں ، نہ جوشِ وحشت میں خاک اُڑائیں
کثافتِ رنج و غم چھٹائیں ، کدورتیں سب تری مٹائیں
“غبار بن کر نثار جائیں ، کہاں اب اُس رہ گذر کو پائیں
ہمارے دل حُوریوں کی آنکھیں فرشتوں کے پر جہاں بِچھے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 14
“خُدا ہی دے صبر جانِ پُر غم ، دِکھاؤں کیوں کر تُجھے وہ عالَم
جب اُن کو جھُرمٹ میں لے کے قُدسی جِناں کا دُولھا بنا رہے تھے
Khuda hee day sabr jaan e purgham dikhaoon kyun kar tujhay woh a’alam
 Jab unko jhurmat main lakay qudsi jinnah ka dulha bana rahay thay.
English Translation Verse 14
The moment was indescribably exciting, when the angels, pure and wise,
 Gathered round him and dressed him as the bridegroom of Paradise.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) – 14
. نہ اب نظر میں وہ جانِ عالم ، نہ قدسیوں کی وہ بزمِ اعظم
نہ وہ طلب کے پیامِ پیہم ، نہ وہ تقاضاے وصل ہردم
مٹیں گے کیوں کر ترے غم و ہم ، کہ اب کہاں وہ بہارِ خرّم
“خُدا ہی دے صبر جانِ پُر غم ، دِکھاؤں کیوں کر تُجھے وہ عالَم
جب اُن کو جھُرمٹ میں لے کے قُدسی جِناں کا دُولھا بنا رہے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 15
“اُتار کر اُن کے رُخ کا صدقہ ،یہ نور کا بٹ رہا تھا باڑا
کہ چاند سورج مچل مچل کر جبیں کی خیرات مانگتے تھے
Utar ker unkay rukh ka sadqa yeh noor ka but raha tha bada
 Kay chand suraj machal machal ker jabeen ki khairat mangtay thay.

 

English Translation Verse 15
The light emitted by his face was distributed among the beggars with generosity.
 The moon and the sun begged most eagerly for this bright charity.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -15
. درِ کرم کا بڑے غنی کا ، وہاں کی بخشش کا پوچھنا کیا
ہر ایک نور و ضیا کا منگتا ، انھیں کے گھر کا پَلا بڑھا تھا
لیے ہوئے ایک ایک کاسہ ، وہ شیَٔ للہ کا شور و غوغا
“اُتار کر اُن کے رُخ کا صدقہ ،یہ نور کا بٹ رہا تھا باڑا
کہ چاند سورج مچل مچل کر جبیں کی خیرات مانگتے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 16
“وہی تو اب تک چھلک رہا ہے ، وہی تو جوبن ٹپک رہا ہے
نہانے میں جو گِرا تھا پانی کٹورے تاروں نے بھر لیے تھے
Wohi to ab tak chalak raha hai wohi to joban tapak raha hai
 Nahanay may jo gira tha pani katoray taroon nay bhar liye thay.
English Translation Verse 16
The same luminous water still shining in their bright path,
 Which the stars had gathered in their cups from his overflowing bath.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -16
. وہ بحرِ فیض آج تک رہا ہے ، اُسی سے عالم چمک رہا ہے
اُسی سے گلشن لہک رہا ہے ، اُسی کا طوطی چہک رہا ہے
فلک جو ایسا دمک رہا ہے ، اُسی چمک سے جھلک رہا ہے
“وہی تو اب تک چھلک رہا ہے ، وہی تو جوبن ٹپک رہا ہے
نہانے میں جو گِرا تھا پانی کٹورے تاروں نے بھر لیے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 17
“بچا جو تلوؤں کا اُن کے دھووَن ، بنا وہ جنت کا رنگ و روغن
جِنھوں نے دُولھا کی پائی اُترن ، وہ پھول گلزارِ نُور کے تھے
Bacha jo talwoon ka unkay dhouwan bana woh Jannat ka rang o roghan
 Jinhoon nay dulha ki payi utran woh phool gulzar e noor kay thay.
English Translation Verse 17
With the surplus sole-washed water Paradise was painted bright,
 Those who wore his used-clothes became flowers, of the garden of light.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -17
. وہی ضیائیں ہیں پر تو افگن ، وہی تجلی ہے شمعِ مسکن
اُسی سے ہے مہر و ماہ روشن ، اُسی سے حوروں کے چمکے جوبن
وہ آبِ نور و ضیا کا مخزن ، یہ لے گئے بھر کے جیب ودامن
“بچا جو تلوؤں کا اُن کے دھووَن ، بنا وہ جنت کا رنگ و روغن
جِنھوں نے دُولھا کی پائی اُترن ، وہ پھول گلزارِ نُور کے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 18
“خبر یہ تحویلِ مہر کی تھی ، کہ رُت سہانی گھڑی پھرے گی
وہاں کی پوشاک زیب تن کی ، یہاں کا جوڑا بڑھا چکے تھے”
Khabar yeh tehweelay maher ki thi kay rut sunhani ghadi phiray gee
 Wahan ki poshak zay-bay tan ki yahan ka jorha badha chukay thay.
English Translation Verse 18
The sun revealed the news that Allah Almighty’s beloved Messenger
 Was soon expected to come back after meeting his Creator.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -18
. مٹی تھی ساری سیاہ بختی ، چمک اٹھی مشتری فلک کی
مچی تھیں دھومیں رچی تھی شادی ، کہ اچھی ساعت ہے آنے والی
گذر چکا دورِ بُرجِ ساقی ،ہوا ہے عزمِ فضاے نوری
“خبر یہ تحویلِ مہر کی تھی ، کہ رُت سہانی گھڑی پھرے گی
وہاں کی پوشاک زیب تن کی ، یہاں کا جوڑا بڑھا چکے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 19
“تجلّیِ حق کا سہرا سر پر ، صلاۃ و تسلیم کی نچھاور
دو رویہ قُدسی پَرے جماکر ، کھڑے سلامی کے واسطے تھے
Tajaliy e haq ka sehra sar per salat o tasleem ki nichawar
 Do roya qudsi paray jama kar kharhay salami kay waastay thay.
English Translation Verse 19
The wedding crown of Allah’s light was on his head amidst a blissful prayer;
 The Angels stood on both sides of his way to present a salute of honour.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -19
. بنے کچھ ایسا وہ بن سنور کر ، کہ بارک اللہ شانِ اکبر
جلوس کے واسطے مقرر ، کیا گیا قدسیوں کا لشکر
شہانہ تھا زیبِ جسمِ انور ، کہ نور پر نور تھا سراسر
“تجلّیِ حق کا سہرا سر پر ، صلاۃ و تسلیم کی نچھاور
دو رویہ قُدسی پَرے جماکر ، کھڑے سلامی کے واسطے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 20
“جو ہم بھی واں ہوتے خاکِ گلشن ، لپٹ کے قدموں سے لیتے اُترن
مگر کریں کیا نصیب میں تو ، یہ نامُرادی کے دن لکھے تھے
Jo hum bhi waan hotay khaq e gulshan lipat kay qadmoon say ley tay utran
 Magar karein kiya naseeb main to yeh namuradi kay din likhay thay.
English Translation Verse 20
Had we been there, we would have sought for some charity;
 How could that happen, when we were destined to live this life of poverty?
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -20
. دِکھا ہی دیتے یہ دل کی الجھن ، بہ شکلِ سنبل بہ طرزِ احسن
سُنا ہی لیتے بہ رنگِ سوسن ، زبانِ حالِ زبوں سےشیون
رسائی ہوتی نہ تا بہ دامن ، تو یوں ہی ہوتا نصیب روشن
“جو ہم بھی واں ہوتے خاکِ گلشن ، لپٹ کے قدموں سے لیتے اُترن
مگر کریں کیا نصیب میں تو ، یہ نامُرادی کے دن لکھے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 21
“ابھی نہ آئے تھے پُشتِ زیں تک ، کہ سر ہوئی مغفرت کی شِلِّک
صدا شفاعت نے دی مُبارک ، گناہ مستانہ جھُومتے تھے”
Abhi na aaye thay pusht e zeen tak kay sir hui maghfirat ki shallak
 Sada shafa’at nay di mubarak! gunaah mastana jhoomtay thay.
English Translation Verse 21
He had hardly sat on the saddle that the journey of salvation ended at a glance;
 The salvation itself congratulated him and the sins engaged themselves in a dance.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -21
. چمک چمک عنصروں کی چُومک ، دمک دمک ہر مکان ہر چک
قدم نہ در سے ہوا تھا منفک ، کہ بولی شی حت صدرک
جلوس پہنچا نہ قُربِ مسلک ، کہ گونجا کڑکا رفعت ذکرک
“ابھی نہ آئے تھے پُشتِ زیں تک ، کہ سر ہوئی مغفرت کی شِلِّک
صدا شفاعت نے دی مُبارک ، گناہ مستانہ جھُومتے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 22
“عجب نہ تھا رخش کا چمکنا ، غزالِ دم خوردہ سا بھڑکنا
شعاعیں بُکے اُڑا رہی تھیں ، تڑپتے آنکھوں پہ صاعقے تھے
Ajab na tha rakhsh ka chamakna gizal e dam khurdasa bharhakna
 Shuaein bukay urha rahi theen tadapte ankhoon pay saieqay thay.
English Translation Verse 22
It is understandable why the Prophet’s horse startled like a frightened deer;
 The rays of light dazzled his eyes and the lightning flashed too near.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -22
. نقاب کا چہرے سے سرکنا ، تجلیِ نورِ حق جھلکنا
وہ چشمِ حور و ملک جھپکنا ، نگاہ بھر کر بھی تک نہ سکنا
وہ رُوے پُرنور کا چمکنا ، وہ آتشِ شوق کا بھڑکنا
“عجب نہ تھا رخش کا چمکنا ، غزالِ دم خوردہ سا بھڑکنا
شعاعیں بُکے اُڑا رہی تھیں ، تڑپتے آنکھوں پہ صاعقے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 23
“ہُجومِ امید ہے گھٹاؤ ، مُرادیں دے کر انھیں ہٹاؤ
اَدَب کی باگیں لیے بڑھاؤ ، ملائکہ میں یہ غُلغُلے تھے
Hujum e umeed hai ghatao muradein day kar inhein hatao
 Adab ki baagein liye badhao malaika may yeh ghul ghule thay.
English Translation Verse 23
The clouds gave alms to the beggars and made sure there was enough room;
 The angels held the reigns respectfully and welcomed the bridegroom.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -23
. فرشتوں کو حکم تھا کہ جاؤ ، یہ بھیڑ چھانٹو پَرے جماو
مگر کسی کا نہ جی دُکھاؤ ، مراد مندوں کو یہ سناؤ
جو منھ سے مانگو ابھی وہ پاؤ ، تم اب سرِ رہ گذر نہ آو
“ہُجومِ امید ہے گھٹاؤ ، مُرادیں دے کر انھیں ہٹاؤ
اَدَب کی باگیں لیے بڑھاؤ ، ملائکہ میں یہ غُلغُلے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 24
“اُٹھی جو گردِ رہِ مُنوّر ، وہ نُور برسا کہ راستے بھر
گھرے تھے بادل بھرے تھے جل تھل ، امنڈ کے جنگل اُبل رہے تھے
Uthi jo garde rahe munawar woh noor barsa kay raaste bhar
 Ghiray thay badal bharay thay jal thal umand kay jangle ubal rahay thay.
English Translation Verse 24
The dust of the luminous path rose up like the clouds of light;
 The space overflowed with rain and the whole way was exceptionally bright.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -24
. ہوا جو خورشید جلوہ گستر ، تو اُس نے چمکائے ماہ و اختر
چڑھا لیا آسماں نے سر پر ، نہ ہوسکا خاکِ پا کے ہم سر
یہ تاب یہ ضَو وہ پائے کیوں کر ، کہ ہے وہ ذرّہ یہ مہرِ انور
“اُٹھی جو گردِ رہِ مُنوّر ، وہ نُور برسا کہ راستے بھر
گھرے تھے بادل بھرے تھے جل تھل ، امنڈ کے جنگل اُبل رہے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 25
“ستم کیا کیسی مَت کٹی تھی ، قمر وہ خاک اُن کی رہِگذر کی
اُٹھا نہ لایا کہ مَلتے مَلتے یہ داغ سب دیکھتا مٹے تھے”
Sitam kiya kaisi mat kati thi qamar! woh khak unkay rah guzar ki
 Utha na laya kay maltay maltay ye daagh sab dekhta mite thay.
English Translation Verse 25
0 moon! You should have brought some dust from the Prophet’s way;
 You would have got rid of your spots by rubbing it on them for a day.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -25
. چمکتی قسمت نصیب ہوتی ، نہ رہتی تقدیر کی سیاہی
مگر یہ گردش کے دن تھے باقی ، کہ چال سوجھی نہ بات سمجھی
اگر نہ کرتا طلب میں سُستی ، عجیب اکسیر ہاتھ آئی
“ستم کیا کیسی مَت کٹی تھی ، قمر وہ خاک اُن کی رہِگذر کی
اُٹھا نہ لایا کہ مَلتے مَلتے یہ داغ سب دیکھتا مٹے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 26
“بُراق کے نقشِ سُم کے صدقے ، وہ گُل کِھلائے کہ سار ے رستے
مہکتے گلبُن لہکتے گلشن ، ہرے بھرے لہلہارہے تھے
Burraq kay naqsh o sum kay sadqe woh gul khilaye kay saray rastey
 Mehaktay gulban lehakte gulshan hare bhare lahlaha rahe thay.
English Translation Verse 26
The hoff-prints of the ‘Buraq’ filled the entire way with flowers;
 In no time all over the place there were fragment orchards and bowers.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -26
. بہارِ عالم میں پھول پھولے ، ہزاروں لاکھوں طرح طرح کے
مگر کہاں سے یہ بات پاتے ، نہ ایسے رنگیں نہ ایسے پیارے
جہاں کے گلشن کے کیا ہیں تختے ، جناں کے گل زار کے بھی بُوٹے
“بُراق کے نقشِ سُم کے صدقے ، وہ گُل کِھلائے کہ سار ے رستے
مہکتے گلبُن لہکتے گلشن ، ہرے بھرے لہلہارہے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 27
“نمازِ اقصیٰ میں تھا یہی سِرّ ، عیاں ہوں معنیِ اوّل آخر
کہ دست بستہ ہیں پیچھے حاضر ، جو سلطنت آگے کر گئے تھے
Namaz e Aqsa main tha yehi seer ayan houn ma’ani awwal akhir
 Key dast basta hain pichey hazir jo salatanat aagay kar gaye thay.
English Translation Verse 27
The divine wisdom of ‘Aqsa’ prayer was to unfold the secret of first and last;
 All the Prophets prayed behind him, though they had actually lived in the past.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -27
. پرانے قبلے میں اپنے صادر ، ہوئے جو وہ شہسوارِ نادر
وہاں اِنھیٖں مقتدا کی خاطر ، کھڑے تھے سب اولین اکابر
یہ رمز پاتی نہ عقلِ قاصر ، ہُوا یہ نکتہ اِسی سے ظاہر
“نمازِ اقصیٰ میں تھا یہی سِرّ ، عیاں ہوں معنیِ اوّل آخر
کہ دست بستہ ہیں پیچھے حاضر ، جو سلطنت آگے کر گئے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 28
“یہ اُن کی آمد کا دبدبہ تھا ، نکھار ہر شَے کا ہورہا تھا
نجوم و افلاک جام و مینا ، اُجالتے تھے کھنگالتے تھے”
Yeh unki aamad ka dabdaba tha nikhar her shaiy ka ho raha tha
 Nujoom o aflak jam o mina ujaltay thay khangaltey they.
English Translation Verse 28
The dignity of his arrival brightened up everything immaculately;
 The stars, the skies, the cups and the containers cleaned smartly.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -28
. کچھ ایسا عرشِ بریں سجایا ، کہ نور کافرش جابجا تھا
کہیں یہ رضواں کا مشغلہ تھا ، جناں کی چیزیں سنوارتا تھا
وہ صاف شفّاف کردیا تھا ، کہ سارا ساماں نیا بنا تھا
“یہ اُن کی آمد کا دبدبہ تھا ، نکھار ہر شَے کا ہورہا تھا
نجوم و افلاک جام و مینا ، اُجالتے تھے کھنگالتے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 29
“نقاب اُلٹے وہ مہرِ انور ، جلالِ رُخسار گرمیوں پر
فلک کو ہیبت سے تپ چڑھی تھی ، تپکتے انجُم کے آبلے تھے
Naqab ultay woh mehr e anwar jalal o rukhsar garmiyoon per
 Falak ko hebat say tap charhi thi tapaktay anjum kay aablay tha.
English Translation Verse 29
When he advanced, his unveiled sun-like face shone with glamour;
 The sky felt over-awed and the stars became dimmer and dimmer.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -29
. وہ گرمِ حُسنِ حبیبِ داور ، کہ سرد ہو جس سے مہرِ محشر
تو پھر کہاں تابِ ماہِ اختر ، کہ چمکیں پیشِ رخِ منور
کمال پر تھا جمالِ سرور ، عیاں تھی شانِ جمیلِ اکبر
“نقاب اُلٹے وہ مہرِ انور ، جلالِ رُخسار گرمیوں پر
فلک کو ہیبت سے تپ چڑھی تھی ، تپکتے انجُم کے آبلے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 30
“یہ جوششِ نور کا اثر تھا ، کہ آبِ گوہر کمر کمر تھا
صفاے رہ سے پھسل پھسل کر ، ستارے قدموں پہ لَوٹتے تھے
Yeh joshay noor ka asar tha key aabay gohar qamar qamar tha
 Sifaey rah say phisal fisal kar sitare qadmon pay laut’tay thay.
English Translation Verse 30
The overflowing light filled the path with luminous water;
 The stars slipped time and again and fell at the feet of Allah’s messenger.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -30
. وہ عالمِ نور سر بسر تھا ، یہاں وہاں تھا اِدھر اُدھر تھا
نہ منزلوں تک وہاں قمر تھا ، نہ تابشِ مہر کا گذر تھا
فقط وہی چاند جلوہ گر تھا ، وہی یَمِ نور جوش پر تھا
“یہ جوششِ نور کا اثر تھا ، کہ آبِ گوہر کمر کمر تھا
صفاے رہ سے پھسل پھسل کر ، ستارے قدموں پہ لَوٹتے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 31
“بڑھا یہ لہرا کے بحرِ وحدت ، کہ دُھل گیا نامِ ریگِ کثرت
فلک کے ٹِیلوں کی کیا حقیقت ، یہ عرش و کرسی دو بُلبُلے تھے
Barha yeh lehra kay behr o hidat key dhul gaya naam e raige kasrat
 Falak key teloon ki kiya haqeeqat yeh arsh o kursi do bulbule thay.
English Translation Verse 31
The ocean of Unity surged forward and washed sands of Diversity;
 Forget the dunes of the sky, just two bubbles were ‘Allah’s Arch and Kursi’
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -31
. بڑھے جو آگے کو اور حضرت ، تو بڑھ گیا اشتیاقِ قربت
چلی کچھ ایسی ہواے الفت ، بھڑک گئی آتشِ محبت
ہوا جو گرمی پہ شوقِ الفت ، برس گیا گھر کے ابرِ رحمت
“بڑھا یہ لہرا کے بحرِ وحدت ، کہ دُھل گیا نامِ ریگِ کثرت
فلک کے ٹِیلوں کی کیا حقیقت ، یہ عرش و کرسی دو بُلبُلے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 32
“وہ ظلِ رحمت وہ رُخ کے جلوے ، کہ تارے چُھپتے نہ کِھلنے پاتے
سنہری زر بفت اُودی اطلس یہ تھان سب دُھوپ چھاوں کے تھے
Woh zill e rehmat woh rukh key jalwe ke taare chupte na khilne paate
 Sunehri zarbaft udi atlas yeh than sab dhoop chaoon ke the.
English Translation Verse 32
His sun-like merciful face eclipsed the stars that shine;
 The moonlight and starlight looked like shadows in his sunshine.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -32
. خدا کے پیارے نبی ہمارے ، کیا ہے بے مثل جن کو حق نے
وہ حُسن یکتا دکھاتے جاتے ، کہ جس پہ دونوں جہان صدقے
جمے تھے وحدت کے رنگ ایسے ، کہ تھے بہم روز و شب کے نقشے
“وہ ظلِ رحمت وہ رُخ کے جلوے ، کہ تارے چُھپتے نہ کِھلنے پاتے
سنہری زر بفت اُودی اطلس یہ تھان سب دُھوپ چھاوں کے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 33
“چلا وہ سروچماں خراماں ، نہ رُک سکا سدرہ سے بھی داماں
پلک جھپکتی رہی وہ کب کے سب اِین و آں سے گُذر چُکے تھے
Chala woh serve e chamaan khiramaan na ruk saka sidra say damaan
 Palak jhapakti rahi woh kab kay sab aeno aan say guzar chuke thay.
English Translation Verse 33
When the unique bridegroom advanced even the lote tree failed to hold him back;
 In the wink of an eye he went beyond this and that range of the track.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -33
جدھر سے نکلا وہ جانِ جاناں ، قدم قدم پر کِھلے گلستاں
بڑھی تھی یہ جوششِ بہاراں ، بنے تھے اَفلاک رشکِ بُستاں
عروج پر تھا ابھی وہ ذی شاں ، کہاں یہ گلشن تھے اس کے شایاں
“چلا وہ سروچماں خراماں ، نہ رُک سکا سدرہ سے بھی داماں
پلک جھپکتی رہی وہ کب کے سب اِین و آں سے گُذر چُکے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 34
“جَھلک سی اک قُدسیوں پر آئی ، ہوا بھی دامن کی پِھر نہ پائی
سُواری دُولھا کی دور پہنچی ، برات میں ہوش ہی گئے تھے
Jhalak see eik qudsiyoon per aayi hawwaa bhi daman ki phir na payi
 Sawari dulha ki dur pohnchi barat main hosh hi gaye thay.
English Translation Verse 34
The angels felt that a glimpse had flashed through their sight and mind;
The bridegroom went far ahead but his companions were left behind.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -34
. خوشی میں تھے منتظر فدائی ، کہ شکل تقدیر نے دکھائی
سرِ گذر گاہ صف جمائی ، مگر نہ امیدِ دل بر آئی
نہ پاس تک ہوسکی رسائی ، نہ آنکھ تابِ نظارہ لائی
“جَھلک سی اک قُدسیوں پر آئی ، ہوا بھی دامن کی پِھر نہ پائی
سُواری دُولھا کی دور پہنچی ، برات میں ہوش ہی گئے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 35
“تھکے تھے رُوحُ الاَمِیں کے بازو ، چُھٹا وہ دامن کہاں وہ پہلو
رِکاب چُھوٹی اُمید ٹُوٹی ، نِگاہِ حسرت کے ولولے تھے
Thakay thay ruhul amin key bazu chuta woh daman kahan woh pehloo
 Rikab chooti ummeed tuti nigah e hasrat key walwaley thay.
English Translation Verse 35
Gabriel’s wings got tired and he could not accompany the divine guest;
 The Prophet’s stirrup slipped out of his hands though he tried to hold it to his best.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -35
. چلے جو ہم رکاب خوش خو ، رکاب تھامے بہ طرزِ نیکو
بہت چلے کی بہت تگ و پُو ، نہ چل سکا پھر بھی ان کا قابو
مجالِ جنبش نہ تھی سرِ مو ، رواں تھے آنکھوں سے غم کے آنسو
“تھکے تھے رُوحُ الاَمِیں کے بازو ، چُھٹا وہ دامن کہاں وہ پہلو
رِکاب چُھوٹی اُمید ٹُوٹی ، نِگاہِ حسرت کے ولولے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 36
“روِش کی گرمی کو جس نے سوچا ، دِماغ سے اک بَھبُوکا پُھوٹا
خِرد کے جنگل میں پھُول چمکا ،دَہر دَہر پیڑ جل رہے تھے
Ravish ki garmi ko jis ney socha dimag say eik bhabuka phoota
 Khir’ad key jungle main eik phool chumka dahar daher paerdh jal rahe thay.
English Translation Verse 36
He, who reflected on the Prophet’s speed suddenly found his mind aflame;
 All the trees in the woods of intellect started burning with shame.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -36
. کسی نے اب تک اِسے نہ جانا ، کہ اُن کا جانا تھا کیسا جانا
نہ عقلِ کامل نے اِس کو سمجھا، نہ وہم ظنّ و گماں میں گذرا
رسائی عقل و وہم ہو کیا ، کہ فکر کی تاب کون لاتا
“روِش کی گرمی کو جس نے سوچا ، دِماغ سے اک بَھبُوکا پُھوٹا
خِرد کے جنگل میں پھُول چمکا ،دَہر دَہر پیڑ جل رہے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 37
“جِلو میں جو مُرغِ عقل اُڑے تھے ، عجب بُرے حالوں گِرتے پڑتے
وہ سدرہ ہی پر رہے تھے تھک کر ، چَڑھا تھا دَم تَیوَر آگئے تھے
Jiloo main jo murgay a’qal uray thay ajab  booray haloon girtay partay
 Woh sidrah hee per’rahay thay thak kar charha dam tewar aa gaye thay.
English Translation Verse 37
The birth of intellect flying ahead of the Prophet ended in a miserable plight;
 They could not go beyond the lote tree in their insurmountable flight.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -37
. مجال کس کی جو کوئی سوچے ، دماغ کس کا جو کوئی سمجھے
اُڑے تھے فہم و خرد کے طوطے ، حواس کے پڑ گئے تھے لالے
ہوئے تھے عاجز جب اونچے اونچے ، تو ہوں رسا اور ہوش کس کے
“جِلو میں جو مُرغِ عقل اُڑے تھے ، عجب بُرے حالوں گِرتے پڑتے
وہ سدرہ ہی پر رہے تھے تھک کر ، چَڑھا تھا دَم تَیوَر آگئے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 38
“قوی تھے مُرغانِ وَہم کے پر ، اُڑے تو اُڑنے کو اور دَم بھر
اُٹھائی سینے کی ایسی ٹھوکر ، کہ خُونِ اندیشہ تُھوکتے تھے
Qavi they murgan e waham kay per uray to urdnay ko aur dam bhar
 Utha’ee seenay ki aisi thokar kay khoonay andesha th’oo’ktay thay.
English Translation Verse 38
The strong-winged birds of superstition flew but soon lost their breath;
 They sustained a fatal blow on their chests and fell down bleeding to death.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -38
. سمجھ میں آئے یہ بھید کیوں کر ، کہ ہے قیاسِ خرد سے باہر
نہ کھائے کیوں مرغِ عقل چکّر ، کہ ہے یہاں عقلِ کل بھی ششدر
جو تھے اولی الاجنحہ موقر ، وہ پہلے ہی گر چکے تھے تھک کر
“قوی تھے مُرغانِ وَہم کے پر ، اُڑے تو اُڑنے کو اور دَم بھر
اُٹھائی سینے کی ایسی ٹھوکر ، کہ خُونِ اندیشہ تُھوکتے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 39
“سُنا یہ اِتنے میں عرشِ حق نے ، کہ لے مبارک ہو تاج والے
وہی قدم خیر سے پھر آئے ، جو پہلے تاجِ شرَف تِرے تھے
Suna yeh itnay mein arsh e haq nay kay lay mubarak ho taaj waley
 Wohi qadam khair say phir aaye jo pehle taaj e sharaaf tere thay.
English Translation Verse 39
At the moment of Allah’s throne heard the angels raising a salutary uproar;
 How nice to welcome back the same auspicious feet, which graced us before.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -39
. ملائکہ ایک دوسرے سے ، نویدِ وصلِ حضور کہتے
کہ آج ارمان ہوں گے پورے ، گریں گے قدموں پہ سب سے پہلے
یہاں یہ ہوہی رہے تھے چرچے ، کہ خود بدولت قریب پہنچے
“سُنا یہ اِتنے میں عرشِ حق نے ، کہ لے مبارک ہو تاج والے
وہی قدم خیر سے پھر آئے ، جو پہلے تاجِ شرَف تِرے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 40
“یہ سُن کے بے خُود پُکار اُٹھّا ، نِثار جاؤں کہاں ہیں آقا
پھر اُن کے تلووں کا پاؤں بوسہ ، یہ میری آنکھوں کے دن پِھرے تھے
Yeh sunkay bay khud pukar utha nisar jaoon kahan hain aaqa
 Phir unkay talwoon ka paoon bosa yeh meri aankhon kay din phire thay.
English Translation Verse 40
On hearing this, the devotee exclaimed, “Where is my master?
 How lucky that my eyes will again kiss the soles of Allah’s Messenger!”
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -40
. وہی ہیں جن کی یہ شانِ والا ، سوا خدا کے کوئی نہ سمجھا
انھیں کی نعلین کا ہے صدقا ، جو تو نے عزو وقار پایا
پھر آج تیرا نصیب چمکا ، کہ وہ ہوئے تجھ پہ جلوہ فرما
“یہ سُن کے بے خُود پُکار اُٹھّا ، نِثار جاؤں کہاں ہیں آقا
پھر اُن کے تلووں کا پاؤں بوسہ ، یہ میری آنکھوں کے دن پِھرے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 41
“جُھکا تھا مجُرے کو عرشِ اَعلی’ ، گِرے تھے سجدے میں بزمِ بالا
یہ آنکھیں قدموں سے مَل رہا تھا ، وہ گِرد قُربان ہورہے تھے
Jhuka tha mujre ko arsh e aala gire they sajde may bazme bala
 Yeh aankhein qadmoon say mal raha tha woh girde qurbaan ho rahay thay.
English Translation Verse 41
Allah’s throne knelt down to welcome, the angels fell again into a prostration’
 It rubbed his eyes on his feet; they showed their utmost veneration.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -41
. جو اپنی آنکھوں سے دیکھا بھالا ، فراق کے درد و غم کو ٹالا
چلا کچھ ایسا چلن نرالا ، قدم پہ گر گر کے دل سنبھالا
مِلا جو دیدارِ شاہِ والا ، تو خوب ارمانِ دل نکالا
“جُھکا تھا مجُرے کو عرشِ اَعلی’ ، گِرے تھے سجدے میں بزمِ بالا
یہ آنکھیں قدموں سے مَل رہا تھا ، وہ گِرد قُربان ہورہے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 42
“ضِیائیں کچھ عرش پر یہ آئیٖں ، کہ ساری قِندِیلیں جِھلمِلائیٖں
حُضورِ خُورشید کیا چمکتے ، چَراغ مُنھ اپنا دیکھتے تھے
Ziyaein kuch arsh per yeh aaein kay sari qindileen jagmagayeen
 Huzoor e khurshid kiya chamaktay chairagh moun apna dekh tay thay.
English Translation Verse 42
Such a bright light shone that all the candles flickered;
 The lamps felt ashamed when the ‘sun’ itself appeared.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -42
. فروغِ حُسنِ خجستہ آئیٖں ، ترقیاں جس نے ایسی پائیٖں
کہ آنکھیں یک لخت چوندھیائیں ، نگاہیں تابِ نظر نہ لائیٖں
وہ مشعلیں نور کی جلائیٖں ، تجلیاں طور کی دکھائیٖں
“ضِیائیں کچھ عرش پر یہ آئیٖں ، کہ ساری قِندِیلیں جِھلمِلائیٖں
حُضورِ خُورشید کیا چمکتے ، چَراغ مُنھ اپنا دیکھتے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 43
“یہی سَماں تھا کہ پیکِ رَحمت ، خبر یہ لایا کہ چلیے حضرت
تُمہاری خاطِر کُشادہ ہیں جو ، کَلیم پر بند راستے تھے
Yehi sam’an tha kay paikay rehmat khabar yeh laya kay chaliye Hazrat
 Tumhari khatir kushada hain woh jo kalim per band rastaay thay.
English Translation Verse 43
In this atmosphere the Messenger of Mercy came respectfully to say;
 “Those ways are open for you today, which were closed for Moses one day.”
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -43
. ملائکہ نے جو دیکھی فرصت ، سمجھ کہ اس وقت کو غنیمت
بڑھائی یوں خوب اپنی عزت ، کہ سب ادا کیں رسومِ خدمت
کوئی سناتا ثنا و مدحت ، کسی کے لب پر دعاےدولت
“یہی سَماں تھا کہ پیکِ رَحمت ، خبر یہ لایا کہ چلیے حضرت
تُمہاری خاطِر کُشادہ ہیں جو ، کَلیم پر بند راستے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 44
“بڑھ اے محمد قَریں ہو احمد ، قریب آ سَروَرِ مُمَجَّد
نثار جاؤں یہ کیا نِدا تھی ، یہ کیا سماں تھا یہ کیا مزے تھے
Badh aie Muhammad [ Sallallahu ‘Alayhi Wasallam ] qareen ho Ahmed [ Sallallahou Alayhi Wasallam ]
 qareeb aa sarwar e mamajad
 Nisar jaoon yeh kiya nida thi yeh kiya samaan tha yeh kiya mazay thay.
English Translation Verse 44
“Move forward, O Muhammed! [Peace Be Upon Him ] Come nearer, O Ahmed, My beloved.”
 What a lovely call it was and what a joyful atmosphere it created!
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -44
. یہی ہے وقت حصولِ مقصد ، خدا ہے خود خواستگارِ آمد
وصال کا شوق ہے جو بے حد ، تو حکم پر حکم ہے مؤکّد
طلب پہ تاکید کد پَہ ہے کد ، کہ جلد آ اے شہ مویّد
“بڑھ اے محمد قَریں ہو احمد ، قریب آ سَروَرِ مُمَجَّد
نثار جاؤں یہ کیا نِدا تھی ، یہ کیا سماں تھا یہ کیا مزے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 45
“تَبَارَکَ اللہ شان تیری ، تُجھی کو زیبا ہے بے نِیازی
کہیں تو وہ جوشِ لَن تَرَانِی ، کہیں تقاضے وِصال کے تھے
Tabarakallah yeh shan teri tujhi ko zaiba hai bay niyazi
 Kahin to woh josh e lan-tarani kaheen takazay visal kay thay.
English Translation Verse 45
“O Allah, all praise be to You; You are undoubtedly carefree;
 Once Moses insisted to see you; here You became anxious to see.”
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -45
. کبھی ہے مقصود پردہ داری ، کبھی ہے حد کی یہ بے حجابی
کسی کو حسرت رہی لقا کی ، کسی سے اظہارِ خود نمائی
نئی ادا ہر جگہ نکالی ، ہیں تیری نیرنگیاں نرالی
“تَبَارَکَ اللہ شان تیری ، تُجھی کو زیبا ہے بے نِیازی
کہیں تو وہ جوشِ لَن تَرَانِی ، کہیں تقاضے وِصال کے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 46
“خِرد سے کہہ دو کہ سر جھُکا لے ، گُماں سے گُذرے گُذرنے والے
پڑے ہیں یاں خُود جِہَت کو لالے ، کِسے بتائے کدھر گئے تھے
Khirad say keh do kay sir jhukaye lay gumaan say guzray guzarnay walay
 Pare hain yahan khud jaihat ko laalay kisay bataye kidhar gaye thay.
English Translation Verse 46
Let intellect bow its head, because it has traveled beyond imagination;
 Direction itself is baffled and it cannot dare to imagine his destination.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -46
. نظر کہیں کچھ نہ دیکھے بھالے ، دہن بھی مُہرِ ادب لگالے
ذرا طبیعت کو دل سنبھالے ، کہ اب یہاں بے خودی مزا لے
دماغ ہوش و حواس ٹالے ، قیاس و اوہام کو نکالے
“خِرد سے کہہ دو کہ سر جھُکا لے ، گُماں سے گُذرے گُذرنے والے
پڑے ہیں یاں خُود جِہَت کو لالے ، کِسے بتائے کدھر گئے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 47
“سراغِ اَین و متیٰ کہاں تھا ،نِشانِ کَیف و اِلیٰ کہاں تھا
نہ کوئی راہی نہ کوئی ساتھی، نہ سنگِ منزل نہ مَرحَلے تھے
Surag aino mataa kahaan tha nishan e kaifo illa kahan tha.
 Na koi rahi na koi sathi naa sang e manzil naa merhalay thay.
English Translation Verse 47
Who could answer where or when? Who could tell us what or how;
 There was neither any companion nor any milestone between them and now.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -47
. زمیں کہاں تھی سما کہاں تھا ،بتائیں کیا راستہ کہاں تھا
وہ رہرو و رہنما کہاں تھا ، کہاں سے آیا کہاں گیا تھا
وہاں کسی کا پتا کہاں کہا تھا ، سواے حق ماسوا کہاں تھا
“سراغِ اَین و متیٰ کہاں تھا ،نِشانِ کَیف و اِلیٰ کہاں تھا
نہ کوئی راہی نہ کوئی ساتھی، نہ سنگِ منزل نہ مَرحَلے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 48
“اُدھر سے پیہم تقاضے آنا ، اِدھر تھا مشکل قدم بڑھانا
جلال و ہیبت کا سامنا تھا ، جمال و رحمت اُبھارتے تھے
Udar say payham taqazay aana idhar say mushkil qadam barhana
 Jalal o haibat ka saamna tha jamalo rehmat ubhartay thay.
English Translation Verse 48
Allah greatly encouraged him though his pace was humbly slow;
 Grandeur checked him but Grace inspired him steadily to go.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -48
. اُدھر سے شانِ کرم دِکھانا ،اِدھر سرِ بندگی جھکانا
اُدھر سے پیغامِ لطف پانا ،اِدھر ثنا و صفت سُنانا
اُدھر سے تعجیل کا بُلانا ، اِدھر لحاظ و ادب سے جانا
“اُدھر سے پیہم تقاضے آنا ، اِدھر تھا مشکل قدم بڑھانا
جلال و ہیبت کا سامنا تھا ، جمال و رحمت اُبھارتے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 49
“بَڑھے تو لیکن جِھجکتے ڈرتے ، حیا سے جھُکتے ادب سے رُکتے
جو قُرب انھیں کی رَوِش پہ رکھتے ، تو لاکھوں منزل کے فاصلے تھے
Barhay to lekin jhee-jhaktay dartay haya say jhuktay adab say ruktay
 Jo qurb unhi ki ravish pay rakhtay to lakhoon manzil kay fasilay thay.
English Translation Verse 49
He advanced hesitantly with feelings of respect and humility;
 Allah led him on this endless journey with an exceptional agility.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -49
. نہ ایسی حالت جو دل کو روئے ، نہ اتنی جرأت کہ پاؤں اُٹّھے
اگر ٹھہرتے تو کیوں ٹھہرتے ، جو آگے بڑھتے تو کیا ہی بڑھتے
بڑھائی ہمت جو شوقِ دل نے ، تو شاہِ والاکچھ اور آگے
“بَڑھے تو لیکن جِھجکتے ڈرتے ، حیا سے جھُکتے ادب سے رُکتے
جو قُرب انھیں کی رَوِش پہ رکھتے ، تو لاکھوں منزل کے فاصلے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 50
“پر اُن کا بڑھنا تو نام کو تھا ، حقیقتہً فِعل تھا اُدھر کا
تنزُّلوں میں ترقی افزا ، دنا تدلّے’ کے سلسلے تھے
Per unka barhna to naam ko tha haqeeq’tan fail tha udhar ka
 Tanazuloon mein taraki afza dana tadalla key silsilay thay.
English Translation Verse 50
The Prophet’s motion was nominal; it was all done by divine will;
 Whenever he slowed down, Allah commanded him to come nearer still.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -50
. جوحال رفتار کا یہ پایا ، تو اُس طرف سے ہوا اشارا
یہ جذبِ اُلفت سے کام نکلا ، کہ اُس نے زورِ کشش دکھایا
کہاں وہ بڑھنا کہاں بڑھانا ، روش میں کیوں کر نہ فرق آتا
“پر اُن کا بڑھنا تو نام کو تھا ، حقیقتہً فِعل تھا اُدھر کا
تنزُّلوں میں ترقی افزا ، دنا تدلّے’ کے سلسلے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 51
“ہوا نہ آخر کو ایک بَجرا ، تمَوُّجِ بحرِ ہُو میں اُبھرا
دنا کی گودی میں اُن کو لے کر ، فنا کے لنگر اُٹھادیے تھے
Hua yeh aakhir kay aik bajra tamojay bahrey hoo mein ubhra
 Dana ki godi mein unko lekar fana kay langar utha diye thay.
English Translation Verse 51
At last a barge emerged from the ocean of His Personality;
 It took him near Allah’s lap and untied the anchor of morality.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -51
. بڑھانا کس کا کہاں کا بڑھنا سب اُس کی قدرت کا تھا تماشا
بشر کا دنیا سے تھا یہ آنا ، تو کچھ سبب ظاہری بھی ہوتا
وہاں کسی شَے کی تھی کمی کیا ، جو اُس نے چاہا ہوا مہیّا
“ہوا نہ آخر کو ایک بَجرا ، تمَوُّجِ بحرِ ہُو میں اُبھرا
دنا کی گودی میں اُن کو لے کر ، فنا کے لنگر اُٹھادیے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 52
“کسے ملے گھاٹ کا کنارا ، کدھر سے گُذرا کہاں اُتارا
بھرا جو مِثلِ نظر طَرارا ،وہ اپنی آنکھوں سے خُود چُھپے تھے”
Kisay milay ghat ka kinara kither say guzra kahan utra
 Bhara jo misle nazar tarara woh apni aankhoon say khud chupay thay.
English Translation Verse 52
Who could see this ocean’s shore? It was all speed and surprise;
 He leapt like sight and became hidden from his own eyes.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -52
. یہاں خرد نے بھی قول ہارا ، حواس بھی کرگئے کنارا
دماغ و دل نے بہت اُبھارا ، نہ دے سکے یہ ذرا سہارا
کہاں یہ ہوش و خرد کا یارا ، رسائی تک اپنی چھان مارا
“کسے ملے گھاٹ کا کنارا ، کدھر سے گُذرا کہاں اُتارا
بھرا جو مِثلِ نظر طَرارا ،وہ اپنی آنکھوں سے خُود چُھپے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 53
“اُٹھے جو قصرِ دنى’ کے پردے ، کوئی خبر دے تو کیا خبر دے
واں تو جاہی نہیں دُوئی کی ، نہ کہہ کے وہ بھی نہ تھے اَرے تھے
Uthay jo Qasray dana kay parde koi khabar dey to kiya khabar day
 Wahan to ja hee nahin duee ki na keh kay woh bhi na thay aray thay.
English Translation Verse 53
When the secrets of Nearness were unveiled, who knows what the Reality was?
 There was no room for otherliness; don’t say he wasn’t; he really was.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -53
. یہاںنہ کچھ فائدہ نظر دے ، نہ کام اندیشۂ بشر دے
خدا جو ایمان کا اثر دے ، تو جان و دل کو نثار کردے
الگ ہی وہم و قیاس دَھر دے ، نہ جاے وحدت دوئی سے بھر دے
“اُٹھے جو قصرِ دنى’ کے پردے ، کوئی خبر دے تو کیا خبر دے
واں تو جاہی نہیں دُوئی کی ، نہ کہہ کے وہ بھی نہ تھے اَرے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 54
“وہ باغ کچھ ایسا رنگ لایا ،کہ غُنچۂ و گُل کا فرق اُٹھایا
گِرہ میں کلیوں کے باغ پُھولے ، گُلوں کے تُکمے لگے ہو ئے تھے
Woh baag kuch aisa rang laya kay guncha o gul ka faraq uthaya
 Girah mein kal’liyoon ki baag phoolay guloon kay takmay lagay huay thay.
English Translation Verse 54
The garden so blossomed that the buds and the roses looked very charming
 The unblown and the fully-blown flowers became equally inviting.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -54
. وہ رنگ یکتائی نے جمایا ، کہ ماسوا کا نشان اُڑایا
یگانگی نے اثر دکھایا ، تفاوتِ جز و کُل مٹایا
بہارِ وحدت نے گُل کھلایا ، کہ فرع کو اصل میں بُلایا
“وہ باغ کچھ ایسا رنگ لایا ،کہ غُنچۂ و گُل کا فرق اُٹھایا
گِرہ میں کلیوں کے باغ پُھولے ، گُلوں کے تُکمے لگے ہو ئے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 55
“محُیط و مرکز میں فرق مشکل ، رہے نہ فاصِل خُطوطِ واصِل
کمانیں حیرت میں سر جھُکائے ، عجیب چکّر میں دائرے تھے
Muhito markaz mein faraq mushkil rahe na faasil khutoot e wasil
 Kamaan e hairat mein sir jhukaye ajeeb chakar mein da’eray thay.
English Translation Verse 55
To differentiate between the circumference and the centre was difficult;
 The arches bowed and the circles felt giddy as a result.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -55
جو قربِ قوسین کی تھی منزل ، سمجھ لیں اُس پہ یہ نکتہ عاقل
کہ قوس دو جب ملے مقابل ، تو بن گیا اِک محیطِ کامل
ہوئے جو باطل نقاطِ فاضل ، تو بیچ میں کچھ رہا نہ حائل
“محُیط و مرکز میں فرق مشکل ، رہے نہ فاصِل خُطوطِ واصِل
کمانیں حیرت میں سر جھُکائے ، عجیب چکّر میں دائرے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 56
“حِجاب اُٹھنے میں لاکھوں پردے ، ہر ایک پردے میں لاکھوں جلوے
عَجَب گھڑی تھی کہ وصل و فُرقت ، جَنَم کے ِبچھڑے گلے مِلے تھے
Hijab uthnay mein lakhoon parde har aik parday main lakhon jalway
 Ajab ghari thi kay waslo furqat janam kay bichray galay milay thay.
English Translation Verse 56
Millions of veils disappeared revealing endless oceans of luminosity;
 It was strange Union of Lights which symbolised diversity in Unity.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -56
. اُدھر سے ہر دم خطاب ہوتے ، ترقی یہ بار بار کرتے
ترقیوں میں حجاب کھلتے ، مزے تھے ہر پردے میں نرالے
وہ دفعتۃً جلوہ کیا دکھاتے ، کہ شوق میں تھے حیا کے نقشے
“حِجاب اُٹھنے میں لاکھوں پردے ، ہر ایک پردے میں لاکھوں جلوے
عَجَب گھڑی تھی کہ وصل و فُرقت ، جَنَم کے ِبچھڑے گلے مِلے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 57
“زبانیں سُوکھی دِکھا کے موجیں ، تڑپ رہی تھیں کہ پانی پائیں
بَھنوَر کو یہ ضُعفِ تِشنگی تھا ، کہ حلقے آنکھوں میں پڑ گئے تھے
Zabanein sukhi dikha kay mojein tarap rahi thien kay pani paein
 Bhanwar ko yeh zofay tashnagi that kay halqay aankhoon mein par gaye thay.
English Translation Verse 57
The waves showed their parched tongues and wriggled in search of water;
 The whirlpool fainted with thirst and its eye stared farther and farther.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -57
. چڑھی ہوئی تھیں عطا کی لہریں ، بڑھی ہوئی تھیں کرم کی نہریں
اشارہ یہ تھا نہائیں دھوئیں ، پئیں پلائیں یہ جتنا چاہیں
وہاں سے سر تا بہ پا عطائیں ، یہاں ابھی خواہشیں تھیں دل میں
“زبانیں سُوکھی دِکھا کے موجیں ، تڑپ رہی تھیں کہ پانی پائیں
بَھنوَر کو یہ ضُعفِ تِشنگی تھا ، کہ حلقے آنکھوں میں پڑ گئے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 58
“وہی ہے اوّل وہی ہے آخِر ، وہی ہے باطِن وہی ہے ظاہِر
اُسی کے جلوے اُسی سے ملنے ، اُسی سے اُس کی طرف گئے تھے
Wohi hai awwal wohi hai aakhir wohi hai batin wohi hai zahir
 Usi kay jalway usi say milnay usi say uski taraf gaye thay.
English Translation Verse 58
He is the First and the Last; He lives in the Absence and the Presence;
 His own hidden light went to see His own visible existence.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -58
. وہی ہے سب کا نصیر و ناصر ، وہی ہے سب پر قدیر و قادر
اُسی سے ہے مبدءِ نوادر ، اُسی پہ ہیں منتہِی اوامر
وہی ہے ظاہر جہاں مظاہر ، وہی ہے منطورِ سب مَناظِر
“وہی ہے اوّل وہی ہے آخِر ، وہی ہے باطِن وہی ہے ظاہِر
اُسی کے جلوے اُسی سے ملنے ، اُسی سے اُس کی طرف گئے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 59
Kaman e imakan kay jhutay nukto tum awwal akhir ki phair mein ho
 Muhit ki chal say to pucho kidhar say aaye kidhar gaye thay.
English Translation Verse 59
O dots on the arch of probability! Why do you guess the first and last?
 Ask the track of the circumference, where did the process begin in the past?
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -59
. حواس اپنے درست کرلو ، پڑے ہو چکر میں اس سے نکلو
بنو نہ اَحول سنبھل کے دیکھو ، یہ ہے حقیقت میں ایک یا دو
مقامِ قوسین کو تو سوچو ، بغور اِس دائرے کو سمجھو
“کمانِ اِمکاں کے جُھوٹے نُقطو! تُم اوّل آخِر کے پَھیر میں ہو
مُحیط کی چال سے تو پُوچھو ، کدھر سے آئے کدھر گئے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 60
“اِدھر سے تھیں نذرِ شہ نمازیں ، اُدھر سے انعامِ خُسروری میں
سلام و رحمت کے ہار گُندھ کر ، گُلو‌ۓ پُر نور میں پڑے تھے
Udhar say theen nazray shah namaz’ain idhar say inaam e khusravi mein
 Salam o Rehmat kay haar gundh ker glue e pur noor mein paray thay.
English Translation Verse 60
Here Allah gave His beloved Messenger a gift of formal and ritual prayers,
 He also honoured him with garlands of durood, and salaam’s regal flowers.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -61
. اِدھر سے ہر بار التجائیں ، یہ کد کہ اُمت کو بخشوالیں
اُدھر سے لطف و کرم کی باتیں ، کہ جتنے چاہو ہم اُتنے بخشیں
اِدھر سے طاعت کی پیش نذریں ، اُدھر سے بخشش ، کرم ، عطائیں
“اِدھر سے تھیں نذرِ شہ نمازیں ، اُدھر سے انعامِ خُسروری میں
سلام و رحمت کے ہار گُندھ کر ، گُلو‌ۓ پُر نور میں پڑے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 61
“زبان کو انتظارِ گُفتَن ، تو گوش کو حسرتِ شُنیدَن
یہاں جوکہنا تھا کہہ لیا تھے ، جو بات سُننی تھی سُن چکے تھے”
Zabaan ko intezar guftan to gos ko hasrat e shunidan
 Yahan jo kehna tha keh liya tha jo baat sun’ni thi sun chukay thay.
English Translation Verse 61
The tongue was anxious to speak and the ear was eagerly to go very near;
 Mysteriously and silently he said what he wanted to say and heard what he wanted to hear.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -61
. یہاں ہے مقبول عقلِ پُر فن ، نہ راہِ رفتن نہ روے ماندن
کہاں ہواے خیالِ روشن ، اُٹھا سکے اُس مکاں کی چلمن
سُنانے سننے کا جن پہ تھا ظن ، ابھی وہ تھے منتظر ہمہ تن
“زبان کو انتظارِ گُفتَن ، تو گوش کو حسرتِ شُنیدَن
یہاں جوکہنا تھا کہہ لیا تھے ، جو بات سُننی تھی سُن چکے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 62
“وہ بُرجِ بطحا کا ماہ پارا ، بِہشت کی سیر کو سِدھارا
چمک پہ تھا خُلد کا سِتارا ، کہ اُس قمَر کے قَدَم گئے تھے
Woh burj e batha ka mahpara bahishat ki sair ko Sidhara
 Chamak pay tha khuld ka sitara kay iss qamar kay qadam gaye thay.
English Translation Verse 62
Then the distinguished guest was taken to Paradise soon;
 The stars of Paradise felt honoured to see the glory of their Arabian moon.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -62
. وہاں سے پایا جو کچھ اشارا ، اُدھر سے رُخصت ہوا وہ پیارا
خوشی سے کرتا چلا نظارا ، خدائی کا کارخانہ سارا
یہ عرض حوروں نے کی خدارا ، دمک دمک کیجے گھر ہمارا
“وہ بُرجِ بطحا کا ماہ پارا ، بِہشت کی سیر کو سِدھارا
چمک پہ تھا خُلد کا سِتارا ، کہ اُس قمَر کے قَدَم گئے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 63
“سُرُورِ مَقدَم کی روشنی تھی ، کہ تابِشوں سے مہِ عَرَب کی
جِناں کے گُلشن تھے جھاڑ فرشی ، جو پُھول تھے وہ کَنوَل بنے تھے
Suroor e maqdam ki roshni thi kay tabishoon say mah e arab ki
 Jina kay gulshan thay jhaar farshi jo phool thay sab kanwal banay thay.
English Translation Verse 63
The Arabian moon was accorded a glorious welcome joyfully;
 All the heavenly flowers became daffodils and the chandeliers shone more brightly.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -63
. جناں کی تقدیر خوب چمکی ، بڑھی تھی وہ جوششِ تجلی
کہ مشرقستاں بنی تھی ساری ، چمکتی تھی ایک ایک کیاری
وہ نور کی چاندنی تھی چھٹکی ، جو اس سے پہلے کبھی نہ دیکھی
“سُرُورِ مَقدَم کی روشنی تھی ، کہ تابِشوں سے مہِ عَرَب کی
جِناں کے گُلشن تھے جھاڑ فرشی ، جو پُھول تھے وہ کَنوَل بنے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 64
“طَرَب کی نازِش کہ ہاں لچکیے ، اَدَب وہ بندش کہ ہِل نہ سکیے
یہ جوشِ ضِدَّین تھا کہ پودے ، کشاکشِ اَرّہ کے تلے تھے
Tarab ki nazish kay haan lachakiye adab woh bandish kay hill na sakiye
 Yeh josh e ziden tha keh poday kasha kish e arah kay talay thay.
English Translation Verse 64
The spirit of ecstasy edged him on but the sense of humility checked him modestly;
 A real conflict of emotions: “To advance or just to stay there reverently.”
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -64
. بہار کا حکم تھا دمکیے ، مرادِ شبنم ذرا چمکیے
نسیم کہتی تھی بس مہکیے، صبا کا ارشاد تھا لہکیے
یہ شورِ حسرت کہ اب لہکیے ، وہ زورِ حیرت کہ منھ ہی تکیے
“طَرَب کی نازِش کہ ہاں لچکیے ، اَدَب وہ بندش کہ ہِل نہ سکیے
یہ جوشِ ضِدَّین تھا کہ پودے ، کشاکشِ اَرّہ کے تلے تھے
Qaseeda e Mairaj Verse 65
“خُدا کی قُدرت کہ چاند حق کے ، کروروں منزل میں جلوه کرکے
ابھی نہ تاروں کی چھاؤں بدلی ، کہ نُور کے تڑکے آلیے تھے
Khuda ki qudrat keh chand haq kay karoroon manzil mein jalwa kar kay
 Abhi na taroon ki chaoon badli keh noor kay tarkay aa liye thay.
English Translation Verse 65
Allah’s omnipotence be praised! His truthful moon shone at millions of stations on his way;
 Even when he returned home by dawn before the starlight faded away.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -65
. مدارجِ قرب سے بھی بڑھ کے ، خدا ہی جانے کہاں وہ پہنچے
ازل سے اُٹّھے نہ تھے جو پردے ، وہ جلوے حق کے کرم سے دیکھے
پلک بھی جب تک نہ کوئی مارے ، کہ یہ گئے بھی پلٹ بھی آئے
“خُدا کی قُدرت کہ چاند حق کے ، کروروں منزل میں جلوه کرکے
ابھی نہ تاروں کی چھاؤں بدلی ، کہ نُور کے تڑکے آلیے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 66
“نبیِ رحمت شفیعِ اُمّت ، رضاؔ پہ لِلّہ ہو عنایت
اِسے بھی ان خِلعتوں سے حصّہ جو خاص رحمت کہ واں بٹے تھے
Nabi E Rehmat Shafi E Ummat RAZA pay Lillah ho inayat
 Isay bhi unn khal’atoon say hisa jo khas rehmat kay waan bate thay.
English Translation Verse 66
Take pity on Raza, O our Intercessor and Allah’s Messenger of Mercy!
 Grant him a small share from the gifts distributed during the Meraj journey.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -66
.اثرؔ نے کی جو ثنا و مدحت ، حضور دیکھیں بہ چشمِ رحمت
صلہ ملے دوجہاں کی دولت ، رہے نہ پھر اس کو کوئی حاجت
مِلا اُسے جس سے فیضِ خدمت، اُدھر بھی کوئی نگاہِ رافت
“نبیِ رحمت شفیعِ اُمّت ، رضاؔ پہ لِلّہ ہو عنایت
اِسے بھی ان خِلعتوں سے حصّہ جو خاص رحمت کہ واں بٹے تھے”
Qaseeda e Mairaj Verse 67
“ثناۓ سرکار ہے وظیفہ ، قبولِ سرکار ہے تمنّا
نہ شاعری کی ہوس نہ پروا ، ردی تھی کیا کیسے قافیے تھے”
Sana e Sarkar hai wazifa qabool e Sarkar hai taman’na
 Na shayari ki hawas na parwah radi thi kiya kaisay kafiye thay.
English Translation Verse  67
My mission is to praise the Prophet; my aim is to achieve his pleasure;
 The poetic rhymes and refrains have no value; Mustapha’s Love is my true treasure.
Tazmeen By : Maulana Muhammed Hasan Asar Qadri Barkati badauni(Wafat 1346 Hij) -67

. یہاں نہ طاعت نہ زہد و تقویٰ ، یہی وسیلہ ہے مغفرت کا
کہ ہے ثنا گوئی اپنا شیوہ ، اِسی سبب سے لکھا یہ خمسہ
مراد ہے نعتِ شاہِ والا، غرض نہیں شاعری سے اصلا
“ثناۓ سرکار ہے وظیفہ ، قبولِ سرکار ہے تمنّا
نہ شاعری کی ہوس نہ پروا ، روی تھی کیا کیسے قافیے تھے”

Advertisements